قومی علمی کمیشن
حکومت ہند
  


نئی
توانائ پورٹل ھنروستان کا
پانی کا پورٹل ھنروستان کا
نئی سفارشات

  زبان
  English
  हिन्दी
  বাংলা
  മലയാളം
  অসমীয়া
  ಕನ್ನಡ
  தமிழ்
  नेपाली
  মণিপুরী
  ଓଡ଼ିଆ
  ગુજરાતી
ہمارا تعارف/مشیر وعملہ

صلاح کار

ڈاکٹر اشوک کولاسکر (مشیر)

بایوانفارمیشن کے میدان میں ایک رہنما کی حیثیت رکھنے والے اشوک بایوتکنالوجی کے شعبے کے بایوانفارمیشن اور افرادی وسائل کے ٹاسک فورس کے رکن ہیں- گذشتہ 25 برسوں میں انہوں نے متعدد ہندوستانی اور امریکی یونیورسٹیوں میں کام کیا ہے، متعدد تحقیقی پیپر شائع کیے ہیں اور سافٹ ویئر کے ٹولز اور ویب پر مبنی ڈاٹا بیس بنایا ہے- پونہ یونیورسٹی کے وائس چانسلر کی حیثیت سے انھوں نے یونیورسٹی کی گورننس، مالی مینجمنٹ، کوالٹی ایشورنس میں انقلابی تبدیلیاں کیں اور یونیورسٹی کے فنڈ میں خاطر خواہ اضافہ کیا- بہت سے انعامات سے نوازے جاچکے اشوک متعدد سائنسی اکیڈمیوں اور ایسوسیشنوں کے فعال رکن بھی ہیں-


کلپناداس گپتا (مشیر)

نیشنل لائبریری کی سابق لائبریرین اور سنٹرل سیکریٹریٹ لائبریری کی ڈائریکٹر محترمہ کلپنا داس گپتا نے قومی علمی کمیشن کے لائبریریوں کے بارے میں قائم کردہ ورکنگ گروپ کے سربراہ کی حیثیت سے بھی خدمات انجام دی ہیں- اور آج کل وہ قومی علمی کمیشن کی لائبریریوں کے بارے میں مشیر کی حیثیت سے کام کررہی ہیں- وہ انڈین لائبریری ایسوسی ایشن کی صدر نشین بھی رہ چکی ہیں- وہ انٹرنیشنل فیڈریشن آف لائبریری ایسوسی ایشن کی علاقائی قائمہ کمیٹی برائے ایشیا و اوشیلنا میں ہندوستان کی نمائندہ رہ چکی ہیں- ان کے پاس 40 برس سے بھی زیادہ کا پیشہ وارنہ تجربہ ہے- وہ ہندوستان سرکار کی متعدد ہائی پاور کمپنیوں کی رکن رہ چکی ہیں- آج کل وہ خدا بخش لائبریری، راجہ رام موہن رائے لائبریری فاونڈیشن کے لائبریری بورڈ کی رکن ہیں- محترمہ کلپنا داس گپتا نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف سائنس کمیونیکیشن اور اینڈ انفارمیشن ریسورسز کے پینل کی رکن بھی ہیں- انھوں نے حکومت ہند اور متعدد اداروں کے نمائندے کی حثیت سے بہت سے بیرونی ممالک میں بین الاقوامی سیمناروں اور کانفرنسوں میں شرکت کی ہے- وہ پہلی واحد خاتون ہیں جو نیشنل لائبریری کی لائبرییرین، سنٹرل سکریٹریٹ لائبریری کی ڈائریکٹر اور انڈین لائبریری ایسوسی ایش کے صدر کے عہدوں پر جلوہ افروزہو چکی ہیں-


رضیہ سلطان اسماعیل (مشیر)

ترقیات کی کارکن رضیہ سلطان اسماعیل نے معلوماتی انتظام و مواصلاتی منصوبہ بندی پالیسی کی حمایت، رابطوں کے قیام اور تربیت و کپپسٹی پلاننگ کے غیررسمی طریقوں میں خصوصی مہارت حاصل کر رکھی ہے- زرائع ابلاغ میں کام کرنے کے بعد انھوں نے 23 برس تک اقوام متحدہ میں انفارمیشن اور ایڈوکیسی میں پیشہ ورانہ خدمات انجام دی ہیں- انھوں ن بیرونی تعلقات کے علاقائی اور قومی پروگراموں اور جنوبی ایشا اور ہندوستان میں یونیسف کے ایکسٹینشن ایجوکیشن پروگراموں کی رہنمائی بھی کی ہے- انھوں نے 1980 کی دہائی میں لڑکیوں کے حقوق کے بارے میں پالیسی وضع کرنے میں اہم کردار ادا کیا تھا - انکی موجودہ مصروفیات میں بچوں کے حقوق اور عقائد کے مابین مکالمے سے متعلق عوامی عمل شامل ہیں- ان کے خیال میں اس ضمن میں غیرسرسکاری تنظیموں کاجائزہ اور ترقی کے بارے میں منصفانہ رپورٹنگ ضروری ہے - ان کو آبادی اور خواتین پر اقوام متحدہ کی فیلو شب بھی عنایت کی جا چکی ہے- ورلڈ پریس انسٹی ٹیوٹ کا مستقل فیلو ہونے کے ناطے وہ ورلڈ سوشل فورم انڈیا ٹرسٹ کی سربراہ ہیں-



عملہ

سنیل باہری(ایگزیکیوٹو ڈائریکٹر)

دہلی اسکول اف اکنامکس سے پوسٹ گریجویٹ ڈگری یافتہ سنیل بہری انڈین آڈٹ اینڈ اکاونٹس سروس کے رکن ہیں- ان کے پاس مرکز اور ریاستوں میں پبلک فائننشیل مینجمنٹ اور آڈٹنگ ک میدان میں 25 برس کا تجربہ ہے- اسٹریٹجک منصوبہ بندی، افرادی وسائل کے مینجمنٹ، پرفارمینس آڈٹ اور ای-گورننس کےطریقوں کے اطلاق میں ان کو خاص دسترس حاصل ہے- ایگزیکیوٹو ڈائریکٹر کی حیثیت سے وہ کمیشن کی انتظامی اور تحقیقی سرگرمیوں کے درمیان رابطہ کار کا کام کررہے ہیں


میتاکشرا کماری (ریسرچ ایسوسی ایٹ)

انٹرنیشنل ریلیشنز اور ڈیولپمنٹ اسٹڈیز میں ایم اے کرنے کے بعد متاکشرانے یوروپین کمیشن کے ڈائریکٹر جنرل فار ڈیولپمنٹ، برسلز میں ضروری تربیت حاصل کی- کمیشن میں مشرقی افریقہ کے تقری پذیر ممالک سے متعلق خوراک کی سلامتی، زراعتی جدید کاری اور گورننس سے متعلق مسائل ان کے کار ہاۓ منصبی میں شامل ہیں- انھوں نے یورپین انسٹی ٹیوٹ فار ایشین اسٹڈیز میں بھی کام کیا ہے جو برسلز میں قائم ایک تھنک ٹینک ادارہ ہے- یہاں انھوں نے اس ادارے کی میگزین کے لۓ ایک مضمون، بعنوان ''پورپین یونین اور ہندوستان کے درمیان ترقیاتی تعاون کے بدلتے رجحان" بھی لکھا ہے- قومی علمی کمیشن میں ان کا دائرہ عمل ای-گورننس، نٹ ورک و پورٹل، خواندگی و زبان پر محیط ہے-


املن جیوتی گوسوامی (ریسرچ اسوسی ایٹ

تربیت سے ایک وکیل املن کے پاس ہاروڈ لا اسکول اور دہلی یونیورسٹی کی اسناد ہیں ان کو یونیورسٹی کا طلائی تمغہ اور انلیکس وضیفے سے بھی نوازا جا چکا ہے- انھیں ہندوستان و امریکہ میں تحقیق، قانونی صلاح، قانونی چارہ جوئی اور کارپوریٹ پریکٹس کے لۓ کام کرنے کا تجربہ بھی ہے- قومی علمی کمیشن میں ان کی ذمہ داریوں میں دانشورانہ املاک کے حقوق (آئی پی آر)، اختراع و ملکیت اور ہندوستان میں قانون کی تعلیم سے متعلق مسائل شامل ہیں-


آدیتی سرف (ریسرچ ایسوسی ایٹ)

دہلی یونیورسٹی سے سماجیات میں ایم اے کرنے کے بعد آدیتی نے 2006 میں قومی علمی کمیشن میں اپنا کریئر شروع کیا- انھیں یونیورسٹی کا طلائی تمغہ عطا کیا گیا ہے- انھوں نے دہلی یونیورسٹی کے انڈر گریجویٹ کے جنس اور سماج کورس میں مہمان لکچرر کے قرائض بھی انجام دیے ہیں- قومی علمی کمیشن میں وہ زراعت اور اسکولی تعلیم پر کام کررہی ہیں-


Namita Dalmia (Research Associate)

Namita completed her B.Tech and M.Tech in Electrical Engineering from the Indian Institute of Technology, Bombay in 2006. She joined Intel Technology, India straight after her post graduation. She worked as design engineer for ten months. She has also been actively involved with ~Pankhudi Foundation which is an NGO working for underprivileged children. At NKC, her main focus areas are Engineering Education, Vocational Education and Training and Science and Technology. She is also assisting with Traditional Knowledge.


Pratibha Bajaj (Research Associate)

Pratibha is a Chemical Engineering graduate from the Indian Institute of Technology, Bombay from the Class of 2005. She joined the Boston Consulting Group (BCG) as an Associate directly after her B.Tech in 2005. At BCG, she has directly worked with clients ranging from consumer durables, automobiles, cement to investment banking and mutual fund industry. At NKC, Pratibha is working on Maths and Science, Management Education, E-governance, Portals and Vocational Education and Training.


Kanan Dhru (Research Associate)

A law graduate from the London School of Economics, Kanan worked on McKinsey/LSE project in London before joining NKC. She is a recipient of the 'Honorary Studentship' of the LSE for her significant contribution to the Indian community and student community in general. She has briefly worked with the World Health Organisation in Geneva; written a column with the Time of India for six months and authored a book based on her experiences as an exchange student in Japan. At NKC she is working on Libraries and Entrepreneurship.


Megha Pradhan (Research Associate)

Megha has done her Masters in Economics from Delhi School of Economics, University of Delhi, where she specialised in Econometrics. She has also interned with Roulac Global Places, a real estate consulting firm, as an economic analyst. At the National Knowledge Commission she will be working on Agriculture as well as building baseline models for the various focus areas.


Pallavi Raghavan (Research Associate)

Pallavi joined the National Knowledge Commission in May 2007, after completing a Masters in Modern Indian History at Jawaharlal Nehru University in New Delhi. She obtained a BA in History (Hons.) from St. Stephen’s College, Delhi University. She has also worked traveled extensively, and lived in countries such as Bhutan, Pakistan, and London. While in Pakistan, she has worked as an intern in the Visa Section of the High Commission of India, Islamabad. In 2006, she was involved in the project of revising the NCERT history textbooks for secondary schools. At NKC, she is involved in the areas of Teacher Training, Medical Education, and Translation.


Deepti Ayyanki (Research Assistant)

Deepti, an alumnus of IMT Ghaziabad (DLP), is a First division Post Graduate in Human Resource Management and International Business. She joined the NKC in October, 2006. Prior to this she was associated with the ITC group of Hotels as an HR Trainee. At the NKC she has been working on the development of a database consisting of stakeholders from diverse focus areas and assisting the outreach programme and research activities at the NKC.


آشیما سیٹھ (ایگزیکٹو اسسٹنٹ)

آشیما نے ائرفورس بال بھارتی سے اسکول کی تعلیم حاصل کرنے کے بعد دہلی یونیورسٹی سے گریجویشن کیا ہے- انھوں نے وائی ایم سی اے (دہلی) سے ایگزیکیوٹو سکریٹریل پریکٹس کورس بھی کیا ہے- آج کل وہ بھارتیہ ودیہ بھون سے فرانسیسی زبان کا کورس کررہی ہیں- قومی علمی کمیشن میں کام شروع کرنے پہلے انھوں نے غیرسرکاری تنظیم کے ذریعہ چلائے جا رہے ایک اسکول میں بھی سات ماہ تک کام کیا ہے- قومی علمی کمیشن میں اپنے عرصہ قیام کے دوران انھوں نے مختلف شعبوں میں کام کرنے کا خاطر خواہ تجربہ حاصل کیا ہے جس کی وجہ سے کمیشن کے روزمرہ کے کاموں میں کافی آسانی ہوگئی ہے-